Rukhsat hua to Ankh Mila kar nahin gia Urdu Hindi Poetry Lyrics

 رخصت ہوا تو آنکھ ملا کر نہیں گیا وہ کیوں گیا ہے یہ بھی بتا کر نہیں گیا 

وہ یوں گیا کہ باد صبا یاد آگئی احساس تک بھی ہم کو دلا کر نہیں گیا

یوں لگ رہا ہے جیسے ابھی لوٹ آئے گا جاتے ہوئے چراغ بجھا کر نہیں گیا

بس اک لکیر کھینچ گیا درمیان میں دیوار راستے میں بنا کر نہیں گیا

شائد وہ مل ہی جائے مگر جستجو ہے شرط وہ اپنے نقش پا تو مٹا کر نہیں گیا

گھر میں ہے آج تک وہی خوشبو بسی ہوئی لگتا ہے یوں کہ جیسے وہ ا کر نہیں گیا

تب تک تو پھول جیسی ہی تازہ تھی اس کی یاد جب تک وہ پتیوں کو جدا کر نہیں گیا

رہنے دیا نہ اس  نے کسی کام کا مجھے اور خاک میں بھی مجھ کو ملا کر نہیں گیا

شہزاد یہ گلہ  ہی رہا اس کی ذات سے جاتے ہوئے وہ کوئی گلہ نہیں کر گیا

Rukhsat hua to Ankh Mila kar nahin gia wo kiun gia hai ye bhi Bata kar Nahin gia

Wo Yun gia Keh Bad-e-saba yad agai Ahsas tak bhi ham ko dila kar Nahin gia

Yun lag rha hai jese Abhi laut ae ga jaty hoe charagh buja kar Nahin gia

Bas ak lakir khenjch gia darmian men Diwar Rasty Rasty men bana kar Nahin gia

Shaid wo Mil hi jae Magar justju hai shart wo apny Naqsh pa to meta kar Nahin gia

Ghar men hai AJ tak Wohi khushbu basi hoi lagta hye Yu keh wo a kar Nahin gia

Tab tak to phool jesi hi tazAh thi os ki yad jab tak wo patiun ko Juda kar Nahin gia

Rehny dia na os ne Kesi Kam ka moje or khak men bhi moje ko Mila kar nai gia

Shehzad ye gila hi Raha os ki Zat se jaty hoe wo koi gila Nahin kar gia



Post a Comment

Previous Post Next Post